15-2-17

بزم منہاج کے زیر اہتمام طلبہ میں تقریری مقابلہ ،عامر سہیل،افتخار ٹھاکر ،اسد کھرل ،ندیم چوہدری کی شرکت

Published: 16th Feb, 2017

بزم منہاج کے زیر اہتما م قائد ڈے کے حوالے سے ہفتہ تقریبات منانے کا سلسلہ جاری ہے۔گزشتہ روز  پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان سابق چیف سلیکٹر اور قومی ہیرو عامر سہیل نے بزم منہاج کے زیر اہتمام منعقدہ تقریری مقابلہ کی تقریب میں بطور مہمان خصوصی خطاب کرتے ہوئے کہاکہ پاکستان کے سافٹ امیج کیلئے کھیل کے میدانوں کو آباد کرنا ہو گا اور سپورٹس کو سیاست اور سازش سے پاک کر کے ہم کھویا ہوا عالمی مقام دوبارہ حاصل کر سکتے ہیں ۔ٹیلنٹ کی کمی نہیں، صرف اپنی ذات کے مفاد پر قومی مفاد کو ہر حال میں ترجیح دینے کی سوچ اپنانے کی ضرورت ہے ۔ڈاکٹر طاہر القادری ایک اعتدال پسند رہنماء ہیں ،خوشی ہے کہ وہ نئی نسل کو جد ید دینی و دنیاوی علوم سے بہرہ مند کر رہے ہیں اور امن کیلئے انکی خدمات پوری دنیا کیلئے مشعل راہ ہیں ۔ تقریب میں معروف کامیڈین افتخار ٹھاکر،سنیئر صحافی ندیم چوہدری ،اسد کھرل،رخشاں میر ،حافظ عثمان ،ایم پی اے شہباز بخاری ،معروف صنعتکار واصف علی ،مفتی عبد القیوم خان ،پروفیسر نواز ظفر ،ممتاز باروی ،عوامی تحریک کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات نور اللہ صدیقی ،جواد حامد ،شہزاد رسول ،حاجی محمد اسحق سمیت مذہبی ،سیاسی ،سماجی رہنماء اور اساتذہ کی بڑی تعداد موجود تھی ۔ عامر سہیل نے کہا ہے کہ آج دشمن ایک منظم سازش کے تحت ہمارے کھیلوں اور ثقافت پر حملہ آور ہے ۔با صلاحیت نوجوان عدم تحفظ کا شکار ہو کر مایوسی کی طرف جا رہے ہیں ۔کرکٹ سمیت تمام کھیلوں پر شکست اور مایوسی کے بادل چھائے ہوئے ہیں ۔نوجوان پاکستان کی امید اور روشن مستقبل ہیں ۔ملک میں بے پناہ ٹیلنٹ موجود ہے ۔پاکستان با صلاحیت لوگوں کا ملک ہے ۔کرکٹ،ہاکی،سکواش،باکسنگ ،کشتی اور دیگر کھیلوں کی وجہ سے ہمیشہ دیار غیر میں سبز ہلالی پرچم سر بلند ہوا ۔ملک کا نام روشن ہوا ،نوجوانوں کو حوصلہ افزائی اور دیانتدار سنیئرز کی ضرورت ہے ۔وہ بزم منہاج کے زیر اہتمام مرکزی سیکرٹریٹ ماڈل ٹاؤن میں کالج آف شریعہ کی تقریب میں شریک تھے ۔ تقریب میں مختلف یونیورسٹیز اور کالجز کے طلبہ کے درمیان تقریری مقابلہ بعنوان’’دست نگر کیوں بن کر رہیں یہ بستی ہے خود داروں کی‘‘ منعقد کیا گیا ۔تقریری مقابلوں میں کالج آف شریعہ کے محمد نواز نے پہلی جی سی یونیورسٹی سے قرات العین نے دوسری اور پنجاب کالج برائے خواتین سے مہران نے تیسری پوزیشن حاصل کی۔طلبہ میں اسناد،شلیڈز اور سرٹیکفکیٹس تقسیم کئے گئے ۔معروف کامیڈین افتخار ٹھاکر نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جدید علوم و فنون سے دوری ہمارے زوال کا باعث بن رہی ہیں ۔ہمارے پاس ہر قسم کی نعمت موجود ہے مگر نا اتفاقی کی وجہ سے ہم عدم استحکام کا شکار ہیں ۔آپس میں اتفاق و اتحاد کی بجائے دوسروں کے اشاروں پر اپنے مسائل کا حل تلاش کر رہے ہیں جس سے ہماری سلامتی ،استحکام اور ترقی داؤ پر لگی ہوئی ہے ۔نوجوان مستقبل کے معمار ہیں انہیں اپنی ذمہ داریوں کا احساس کرنا ہو گا ۔سنئیر صحافی ندیم چوہدری اور اسد کھرل نے کہا کہ سانحہ ماڈل ٹاؤن کے شہداء کو سلام پیش کرتے ہیں ،اور شہداء کے ورثاء بھی سلام کے مستحق ہیں ،جنہوں نے مشکل حالات کے باوجود حکمرانوں سے کوئی سودے بازی نہیں کی اور دیت وصول نہیں کی ۔دونوں سنیئرصحافیوں نے کہا کہ ملکی تاریخ میں یہ پہلی بار ہوا ہے کہ حکمران قتل اور کرپشن کے مقدمات میں قانون کی گرفت میں آ رہے ہیں ،اس سے قبل ہمیشہ طاقت کے زور پر مقدمات کی سماعت سے قبل ہی معاملات ختم کر دئیے جاتے تھے ۔انہوں نے مزید کہا کہ ملوث عناصر سانحہ ماڈل ٹاؤن اور پانامہ لیکس سے نہیں بچ سکیں گے ۔معروف صنعتکار واصف علی نے کہا کہ خودی کو حاصل کرنے واحد راستہ تعلیمات رسول اکرم ﷺکو اپنانا ہے ۔حافظ عثمان نے کہا کہ طلباء 4 چیزوں کو کبھی خود سے دور نہ کریں ۔۔۔ اساتذہ،والدین،اقبال ؒ ،قائد اعظم۔