3

نااہل پاکستان کے خلاف انڈیا کے سلطانی گواہ بن چکے:ڈاکٹر طاہر القادری

دہشتگرد بھیجے جانے کا الزام سنگین،معاملے کی مکمل چھان بین کی جائے:سربراہ عوامی تحریک

 

 

پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر محمد طاہر القادری نے کہا ہے کہ ممبئی حملوں میں پاکستان سے دہشتگرد انڈیا بھیجے جانے کے انتہائی گھناؤنے اور سنگین الزام پر قوم مطالبہ کرتی ہے کہ نواز شریف مذکورہ میڈیا رپورٹ کے تناظر میں چوبیس گھنٹے کے اندر وضاحت پیش کریں ورنہ قوم کا یہ شک کامل یقین میں تبدیل ہوجائے گا کہ نااہل پاکستان کے خلاف انڈیا کے سلطانی گواہ بن چکے ہیں۔ انہوں نے اپنے بیان میں کہا کہ3 بار وزیر اعظم رہنے والے شخص کے حوالے سے ممبئی حملوں سے متعلق پاکستان پر الزام نظر انداز نہیں کیا جاسکتا اس کی مکمل چھان بین ہونی چاہیے، یہ ریاست کے خلاف اعلانیہ بغاوت ہے اور بھارتی بیانیہ ہے۔انہوں نے کہا کہ ہم اس سے قبل بھی یہ بات قوم کے روبرو پیش کر چکے ہیں کہ بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کا جاتی امراء، نجی تقریب میں آنا،جندال کا بغیر کسی پیشگی اطلاع کے نااہل سے ون ٹو ون ملاقات کرنا اور پاکستان کوتوڑنے کے ایجنڈے پر کام کرنیوالے کلبھوشن کی گرفتاری پر مذمت نہ کرنااور گذشتہ پانچ سال میں 70سال سے زیادہ کنڑول لائن پر حملے ہونا بلاجواز نہیں ہے۔بھارت دہشتگرد بھیجے جانے کے گھناؤنے الزام کے بعد اس امر میں کسی کو شک نہیں ہونا چاہیے کہ نااہل کرپٹ ہی نہیں سیکیورٹی رسک بھی ہے،اشرافیہ کی شوگر ملز میں بھارتی ٹیکنیشنز کی موجودگی کی اطلاع دی تھی جس کے فوری بعد مل کو آگ لگ گئی تھی، کون کون سے بھارتی ان کی شوگر ملز میں کام کر رہے تھے ان کے عہدے اور پاسپورٹ نمبرز بھی میڈیا کو جاری کر دیئے تھے، انہوں نے کہا کہ نااہل کی الزام تراشی کی صداقت جاننے کے لیے اعلیٰ سطحی کمیشن قائم کیا جائے۔بھارت میں دہشتگرد بھیجنے کا الزام دہشتگردی کی جنگ اور 70ہزار سے زائد قربانیوں سے غداری ہے۔اگر اس میں کوئی بال برابر بھی صداقت ہے تو پھر وہ بطور وزیر اعظم چار سال خاموش کیوں رہے؟