3

قوم ایک نئے مجیب کا راستہ روکنے کیلئے یکجان ہو جائے:ڈاکٹر طاہرالقادری

ماڈل ٹاؤن کے قاتل چمڑی اور دمڑی بچانے کیلئے قومی سلامتی کو قتل کرنے کے در پے ہیں
وزیراعظم فیصلہ کریں وہ ریاست کے ساتھ ہیں یا ریاست کیخلاف سازشیں کرنیوالوں کے؟
غدارانہ بیان پر سینیٹ، قومی اسمبلی اور چاروں صوبائی اسمبلیاں مذمتی قراردادیں پاس کریں

 

 

پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر محمد طاہرالقادری نے کہا ہے کہ قوم ایک نئے مجیب کا راستہ روکنے کیلئے یکجان ہو جائے۔سانحہ ماڈل ٹاؤن کے قاتل اب قومی سلامتی کو خدانخواستہ قتل کرنے کے در پے ہیں، قومی سلامتی کمیٹی کا اعلامیہ نااہل نواز شریف کے قومی جرم کی تصدیق ہے، قومی سلامتی کیخلاف دئیے گئے بیان کی مذمت کافی نہیں،فیصلہ کن کارروائی بھی ہونی چاہیے،اب کسی آلہ کار کو خاندانی لوٹ مار اور شخصی مفادات کے تحفظ کیلئے پاکستان اور عوام کے مستقبل سے کھیلنے کی اجازت نہ دی جائے۔ قومی اسمبلی،سینیٹ بشمول چاروں اسمبلیاں غدارانہ بیان پر مذمتی قراردادیں پاس کریں، گزشتہ روز انہوں نے کورکمیٹی کے ہنگامی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ نااہل نواز شریف نے بھارتی لابی کا لکھ کر دیا گیا موقف انٹرویو کا حصہ بنایا، بیان کے بعد بھارتی میڈیا کے فی الفور شروع ہونے والے زہریلے پروپیگنڈے سے گٹھ جوڑ ثابت ہو گیا، نواز شریف انڈیا کی انویسٹمنٹ سے برسراقتدار لائے گئے، ان کی برطرفی پر ان کے ’’غیر ملکی محسن ‘‘ صدمے کی حالت میں ہیں، شاہد خاقان عباسی فیصلہ کریں وہ ریاست کے ساتھ ہیں یا ریاست کے خلاف زہر اگلنے والے کے ساتھ، وزیراعظم کے منصب پر بیٹھا شخص کہہ رہا ہے کہ بیان توڑ مروڑ کر پیش کیا گیا جبکہ نااہل باردگر تصدیق کررہا ہے جو کہا اس پر قائم ہوں، ڈاکٹر طاہرالقادری نے کہا کہ اشرافیہ اپنے جرائم کی پردہ پوشی اور لوٹ مار بچانے کیلئے پاکستان کو سیاسی، اقتصادی، سلامتی، کے بحران سے دو چار کرنے کے ایجنڈے پر کاربند ہے، انہیں اپنی ذات سے آگے کچھ نظر نہیں آتا، انہوں نے کہا کہ 2سال قبل قوم کو شریف خاندان کی ملوں میں بھارتیوں کے کام کرنے کے حقائق پیش کیے تھے، نام اور پاسپورٹ نمبر بھی دئیے تھے، خدا جانے ریاستی اداروں نے اس وقت کارروائی کیوں نہیں کی؟ آج جو کچھ سامنے آرہا ہے یہ منصوبہ بندی کے عین مطابق ہے۔